اردوئے معلیٰ

Search

لب کشائی کو اذنِ حضوری ملا چشمِ بے نور کو روشنی مل گئی

ہاتھ اٹھاوں میں اب کس دعا کے لیے انکی نسبت سے جب ہر خوشی مل گئی

 

ذوق میرا عبادت میں ڈھلنے لگا زاویہ گفتگو کا بدلنے لگا

ساعتیں میری پرکیف ہونے لگیں دھڑکنوں کو مری بندگی مل گئی

 

ناز اپنے مقدر پہ آنے لگا ہر کوئی ناز میرے اٹھانے لگا

دھل گیا آئینہ میرے کردار کا جب سے ہونٹوں کو نعتِ نبی مل گئی

 

ان کی چشمِ عنایت کا اعجاز ہے ورنہ کیا ہوں میں کیا میری پرواز ہے

خامیاں میری بنتی گئیں خوبیاں زندگی کو مری زندگی مل گئی

 

میری تقدیر بگڑی بنائی گئی بات جو بھی کہی کہلوائی گئی

میں نے تو صرف تھاما قلم ہاتھ میں جانے کیسے کڑی سے کڑی مل گئی

 

زندگی جب سے ان کی پناہوں میں ہے ایک تابندگی سی نگاہوں میں ہے

مجھ کو اقرار ہے اس کے قابل نہ تھا ذاتِ وحدت سے جو روشنی مل گئی

 

مدحتِ مصطفےٰ ہے وہ نورِ مبیں جس کا ثانی دو عالم میں کوئی نہیں

آس اس کی شعاعوں کے ادراک سے راہ بھٹکوں کو بھی رہبری مل گئی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ