اردوئے معلیٰ

Search

لُو چل رہی ہے نام کو سایہ کہیں نہیں

حدّت وہ ہے کہ وقت کی سانسیں ہیں آتشیں

 

آنکھیں اُٹھا کے دیکھ ذرا اے دل حزیں

گردوں تنور ہے کرۂ نار ہے زمیں

 

اک شعلہ زار ہے کہ ہے میدانِ کربلا

اک آگ ہے کہ ریگِ بیا بانِ کربلا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ