لکھنے بیٹھا ہوں میں نعتِ صاحبِ خلقِ عظیم

 

لکھنے بیٹھا ہوں میں نعتِ صاحبِ خلقِ عظیم

دستگیری میری فرما اے مرے ربِ کریم

 

نورِ چشمِ آمنہ بی نامور دُرِ یتیم

ہے خلف اس کا کہ جس سے منسلک ذبحِ عظیم

 

وہ سراج الانبیاء، ختم الرسل، سید، زعیم

وہ کہ ہے قندیلِ روشن بر صراطِ مستقیم

 

وہ سپہ سالارِ اعظم وہ دلاور وہ جری

اس کی سطوت سے دہلتا تھا دلِ فوجِ غنیم

 

وہ رسولِ ہاشمیؐ عالی نسب والا صفات

بار یابِ جلوہ گاہِ ذاتِ مولائے کریم

 

پیکرِ حسنِ مکمل اف وہ فرخندہ جبیں

سیرتِ پاکیزہ اف تفسیرِ قرآنِ حکیم

 

قبلِ بعثت ہی سے تھا مشہور وہ صادق امیں

اس کی فطرت تھی براہیمی تو قلب اس کا سلیم

 

ہیں سزاوارِ جہنم وہ کہ اس سے پھر گئے

نام لیواؤں کی اس کے ہے جزا باغِ نعیم

 

ساری دنیا کی عبث تو چھانتی پھرتی ہے خاک

ایک مشتِ خاکِ طیبہ لا کے دے بادِ نسیم

 

یاد آئی گیسوؤں والے کی جب بھی اے نظرؔ

غنچۂ دل کھل اٹھا آنے لگی موجِ شمیم

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

ضیائے سدرہ و طوبیٰ و کل جہاں روشن
جس جگہ بے بال و پر جبریل سا شہپر ہوا​
زمیں سے تا بہ فلک ایسا رہنما نہ ملا
مہر ھدی ہے چہرہ گلگوں حضورؐ کا
ہوئے جو مستنیر اس نقشِ پا سے
حَیَّ علٰی خَیر العَمَل
بس قتیلِ لذتِ گفتار ہیں
تجھے مِل گئی اِک خدائی حلیمہ
قائم ہو جب بھی بزم حساب و کتاب کی
نہیں شعر و سخن میں گو مجھے دعوائے مشاقی

اشتہارات