لہجے کو دے سخن الگ، حرفوں کو بانکپن جُدا

لہجے کو دے سخن الگ، حرفوں کو بانکپن جُدا

مدحِ نقوشِ پا کی ہے شوخیٔ فکر و فن جُدا

 

اُن کے دیارِ ناز میں لیتا ہُوں خُلد کے مزے

یوں تو یہ ہوش ہے مجھے دونوں کی ہے پھبن جُدا

 

ویسے تو تیرے دَم سے ہے ثبتِ وجودِ کُل، مگر

تیرا زماں ہے منفرد، باقی ہیں سب زمن جُدا

 

یہ ہے ترے یقیں میں گُم، یہ ہے ترے گماں میں خوش

گرچہ ترے فقیر کی آب و ہَوا، وطن جُدا

 

آمدِ ماہِ رنگ کی سارے چمن میں دھُوم ہے

بُلبل و قُمری رقص جُو، لالہ و گُل مگن جُدا

 

مہر و مہ و نجوم کے اپنے ہیں سلسلے الگ

تیرے مضافِ شہر سے کھِلتی ہے اِک کرن جُدا

 

آپ ہیں متنِ حرفِ کُل، باقی ہیں سارے حاشیے

نکہتِ کُل سے متّصل کھِلتا ہے اِک چمن جُدا

 

ویسے تو چھوڑ جائیں گے اپنے بھی اور پرائے بھی

لیکن نہ ہو گا نعت سے ہرگز مرا کفن جُدا

 

علم و ادب کے شہر میں لاکھوں بلند نام ہیں

تیرے ثنا گروں کا ہے مرتبۂ سخن جُدا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

ضیائے سدرہ و طوبیٰ و کل جہاں روشن
جس جگہ بے بال و پر جبریل سا شہپر ہوا​
زمیں سے تا بہ فلک ایسا رہنما نہ ملا
مہر ھدی ہے چہرہ گلگوں حضورؐ کا
ہوئے جو مستنیر اس نقشِ پا سے
حَیَّ علٰی خَیر العَمَل
بس قتیلِ لذتِ گفتار ہیں
تجھے مِل گئی اِک خدائی حلیمہ
قائم ہو جب بھی بزم حساب و کتاب کی
نہیں شعر و سخن میں گو مجھے دعوائے مشاقی

اشتہارات