اردوئے معلیٰ

Search

مانا کہ سو حجاب میں حسن و جمال ہے

لیکن نگاہِ شوق سے بچنا محال ہے

 

اک آرزو جو زینتِ وہم و خیال ہے

اک دردِ لادوا ، خلش لازوال ہے

 

الجھا ہوا ہوں کشمکشِ زندگی سے میں

اک دل ہے اور حسرت و ارماں کا جال ہے

 

دل ٹوٹنے کا خاک مداوا کرے کوئی

شیشہ جو ٹوٹ جائے تو جڑنا محال ہے

 

اک عرصۂ جدائی ہیں ہستی کے چار دن

پیغامِ موت کیا ہے ، پیامِ وصال ہے

 

گھر میں اثرؔ چراغ جلائے تو کیا کِیا

طوفان میں چراغ جلانا کمال ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ