اردوئے معلیٰ

Search

ماہِ تاباں سے بڑھ کر ہے روشن جبیں تجھ سا کوئی نہیں تجھ سا کوئی نہیں

رشکِ خورشید و انجم ہے روئے حسیں تجھ سا کوئی نہیں تجھ سا کوئی نہیں

 

جس نے دیکھی ہے آقا تری اک جھلک تیرے چہرے کے جلووں میں گم ہو گیا

بس وہیں پر نگاہیں جمی رہ گئیں تجھ سا کوئی نہیں تجھ سا کوئی نہیں

 

تیری انگلی اٹھی ڈوبا سورج پھرا ایک اشارہ کیا چاند ٹکڑے ہوا

ہیں زمیں آسماں تیرے زیر نگیں تجھ سا کوئی نہیں تجھ سا کوئی نہیں

 

صحنِ اقصیٰ میں تکتے رہے مرسلیں رک گئے جا کے سدرہ پہ روح الامیں

تیری منزل تھی اس سے بھی آگے کہیں تجھ سا کوئی نہیں تجھ سا کوئی نہیں

 

قاب قوسین و ادنی پہ تو جلوہ گر چاند تارے ہوئے تیری گردِ سفر

تیری انگلی پہ جھکتا ہے ماہِ مبیں تجھ سا کوئی نہیں تجھ سا کوئی نہیں

 

ہے جلیلِ حزیں تیرے در کا گدا حشر میں لاج رکھنا خدارا شہا !

صدقہ حسنین کا رحمتِ عالمیں تجھ سا کوئی نہیں تجھ سا کوئی نہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ