اردوئے معلیٰ

Search

 

متاعِ نعت میں حرف سپاس رکھتے ہیں

اسی پہ طرزِ عمل کی اساس رکھتے ہیں

 

مشامِ جاں ہے معطر اسی گل تر سے

شبوں میں اسم پیمبر کی باس رکھتے ہیں

 

وہ جامِ کوثر و تسنیم بھی چکھیں گے ضرور

جو ان کے جامِ زیارت کی پیاس رکھتے ہیں

 

ہمیشہ چومیں گے روضے کی جالیوں کو ہم

دعائے نیم شبی میں یہ آس رکھتے ہیں

 

وہ لوگ مر کے بھی رکھتے ہیں نسبتِ بطحا

لحد میں خاک مدینہ جو پاس رکھتے ہیں

 

سکون شاہدہ ان کو نصیب ہوتا ہے

جو یاد طیبہ میں خود کو اداس رکھتے ہیں

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ