اردوئے معلیٰ

Search

مجھے در پہ پھر بُلانا مدنی مدینے والے

مئے عشق بھی پلانا مدنی مدینے والے

 

مری آنکھ میں سمانا مدنی مدینے والے

بنے دل ترا ٹھکانا مدنی مدینے والے

 

تری جب کہ دید ہوگی جبھی میری عید ہوگی

مرے خواب میں تم آنا مدنی مدینے والے

 

مجھے سب ستا رہے ہیں مرا دل دُکھا رہے ہیں

تمھیں حوصلہ بڑھانا مدنی مدینے والے

 

مرے سب عزیز چھوٹے سبھی یار بھی تو روٹھے

کہیں تم نہ رُوٹھ جانا مدنی مدینے والے

 

میں اگرچہ ہوں کمینہ ترا ہوں شہِ مدینہ

مجھے سینے سے لگانا مدنی مدینے والے

 

ترا تجھ سے ہوں سوالی شہا پھیرنا نہ خالی

مجھے اپنا تم بنانا مدنی مدینے والے

 

یہ کرم بڑا کرم ہے ترے ہاتھ میں بھرم ہے

سرِ حشر بخشوانا مدنی مدینے والے

 

تری سادگی پہ لاکھوں تری عاجزی پہ لاکھوں

ہوں سلامِ عاجزانہ مدنی مدینے والے

 

ملے نزع میں بھی راحت، رہوں قبر میں سلامت

تو عذاب سے بچانا مدنی مدینے والے

 

مجھے آفتوں نے گھیرا، ہے مصیبتوں کا ڈیرہ

یا نبی مدد کو آنا مدنی مدینے والے

 

ترا غم ہی چاہے عطارؔ، اسی میں رہے گرفتار

غم مال سے بچانا مدنی مدینے والے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ