اردوئے معلیٰ

Search

مجھے دو اِذن کہ میں ایسا انتخاب لکھوں

مدینے پاک کے ذرّوں کو آفتاب لکھوں

 

وہ باغِ طیبہ کے گل کی تو بات کیا کہنے!

وہاں کے خاروں کو بھی خلد کے گلاب لکھوں

 

جنہوں نے تھاما ہے دامن حضور کا لوگو!

اُنہیں نصیب کے میداں میں کامیاب لکھوں

 

مری ہے آرزو مولا کہ اُن کی مدحت کے

اُنہی کے عشق میں میں عشق کے ہی باب لکھوں

 

کبھی بلائے جو قسمت مجھے مدینے میں

تو اُن کے شہر کی ہر شے کی آب و تاب لکھوں

 

یہ جستجو ہے رضاؔ کی جب آئے وقت ایسا

میں اپنی جان کو بھی نذرِ آنجناب لکھوں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ