اردوئے معلیٰ

Search

محبت سے سرشار ہو کر لکھی ہے

بصد شوق سنیے کہ نعتِ نبی ہے

 

توجہ خصوصی جو اللہ کی ہے

دیارِ نبی میں عجب دلکشی ہے

 

ضیا گستری ہی ضیا گستری ہے

وہ منظر ہے ہر سو کہ بس دیدنی ہے

 

وہ ماحولِ روضہ میں خوشبو بسی ہے

کوئی جیسے جنّت کی کھڑکی کھلی ہے

 

یہ اعزاز و اکرامِ خاکِ مدینہ

جبینِ فلک تک بھی دیکھیں جھکی ہے

 

کشاں لے چلا سب کو شوقِ زیارت

ہر اک سمت سے ایک دنیا چلی ہے

 

قدم اُٹھ رہے ہیں ادھر والہانہ

تمنّائے خوابیدہ سب جاگ اٹھی ہے

 

تصور میں آیا جو گنبد کا نقشہ

فسردہ دلوں پر بہار آ گئی ہے

 

کلامِ خدا آخری جس پہ اترا

وہی تو رسولِ خدا آخری ہے

 

ہوا دینِ قیم کا اتمام جس پر

وہ اُمّی لقب ہی ہمارا نبی ہے

 

حضوری میں اس کی جواں مرد کیسے

ابوبکرؓ و فاروقؓ و عثماںؓ علیؓ ہے

 

فرشتے کمر بستہ خدمت میں اس کی

وہ ہے کجکلاہی وہ شانِ شہی ہے

 

وہ فخرِ نبوّت وہ شانِ رسالت

صفِ انبیا و رُسل مقتدی ہے

 

خدا کا درود و سلامِ محبت

اترتا ہے جس پر ہمارا نبی ہے

 

نقوشِ قدم کا جو پیرو ہو اس کے

وہی پارسا ہے وہی متّقی ہے

 

غمِ دل سے مجبور ہوں لب کشا ہوں

بہ حالِ زبوں آپ کا امّتی ہے

 

بھٹکتا ہے صحرائے دنیا میں تنہا

بہر سمت رہزن ہیں فتنہ گری ہے

 

نگاہوں سے اوجھل حقیقت کی راہیں

بہر گام لغزش وہ تیرہ شبی ہے

 

بجھا سا ہے ہر دم چراغِ تمنّا

نہ کوئی خوشی ہے نہ دل بستگی ہے

 

دلوں میں محبت ہے اب کالعدم سی

ہر اک کو ہر اک سے دل آزردگی ہے

 

پسِ پشت ہے مقصدِ آفرینش

کہ بیگانۂ فرض و امر و نہی ہے

 

جنابِ خدا میں ہماری سفارش

شہا کیجیے گا کہ موقع ابھی ہے

 

اسے بھی خدا بار یابِ حرم کر

نظرؔ کی دلی آرزو اب یہی ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ