اردوئے معلیٰ

Search

محبت ہے سراپا دردِ دل کیا

عذابِ اضطرابِ مستقل کیا

 

ہوا آدم کو حکمِ اھبطوا کیوں

ضروری تھا جہانِ آب و گل کیا

 

ہے تجھ سے ملتے رہنے کا بہانہ

ادائے فرض و سنت کیا، نفل کیا

 

مچلتی آرزوئیں ہیں کہاں اب

ہوئی ہیں حسرتوں میں منتقل کیا

 

محبت ہی سے قائم اس کی عظمت

محبت ہی نہیں تو پھر یہ دل کیا

 

دیارِ عشق میں آتش نوا بن

نوائے سرد و آہِ مضمحل کیا

 

لہو رِستے نظرؔ گزرا زمانہ

یہ ہوں گے زخمِ دل اب مندمل کیا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ