محسن و غمخوارِ انساں ہیں حضور

محسن و غمخوارِ انساں ہیں حضور

عظمت و توقیرِ قرآں ہیں حضور

 

اُن کے ہی لطف و کرم میں زندگی

باعثِ تسکینِ ہر جاں ہیں حضور

 

ہر جگہ ، ہر موڑ پر ، ہر دور میں

اپنی اُمت کے نگہباں ہیں حضور

 

صدرِ بزمِ مرسلاں ، فخر الہدیٰ

وصل کی شب کے بھی مہماں ہیں حضور

 

نورِ عالم ، رحمتِ کونین ہیں

شاہِ جنت ، ظِلِّ رحماں ہیں حضور

 

سر سے لے کر پاؤں تک ہیں روشنی

شاہکارِ ربِ ذیشاں ہیں حضور

 

شان جن کی سب سے اعلیٰ ہے رضاؔ

ماوارئے عقلِ انساں ہیں حضور

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

شاداں ہیں دونوں عالم، میلادِ مصطفیٰ پر
خطا ،ختن کے مشک سے دہن کو باوضُو کروں
مجھے آپؐ سے جو محبت نہ ہوتی
کچھ نہیں مانگتا شاہوں سے یہ شیدا تیرا
اے جود و عطا ریز
جس نے سمجھا عشق محبوب خدا کیا چیز ہے
سردارِ قوم سرورِ عالم حضورؐ ہیں
لبوں پہ جس کے محمد کا نام رہتا ہے
ہر دل میں تیریؐ آرزو
مصروفِ حمدِ باری و مدحِ حضورؐ تھا​