محورِ مہر کہوں راحمِ اعدا لکھوں

محورِ مہر کہوں راحمِ اعدا لکھوں

دہر کے راہِ عمل کا اسے اسوہ لکھوں

 

اس کو اعلیٰ کہوں اور سائرِ اسریٰ لکھوں

اور اللہ کے دلدار کا سہرا لکھوں

 

اس کو والی کہوں مالک کہوں حاکم لکھوں

کملی والا کہوں ہادی کہوں مولا لکھوں

 

سارے عالم کا مددگار ہے اسمِ احمد

درد کے مارے ہوئے لوگوں کا ماوا لکھوں

 

اس کو طس کہ حٰم کہ مُلہم لکھوں

اس کی کاکُل کو مہک مکھڑے کو طہٰ لکھوں

 

اس کو راحم کہوں سرور کہوں ارحم لکھوں

اس کی آمد سے گُلِ مدح کو مہکا لکھوں

 

اس کو سردارِ رسل ، آسرا عالم کا کہوں

اس کو حاکم کہوں اور اسریٰ کا دولھا لکھوں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ