اردوئے معلیٰ

مدحتِ سرورِ عالم مجھے آساں ہو جائے

نگہِ لطف تری اے مرے یزداں ہو جائے

 

دل یہ جب محوِ خیالِ شہِ خوباں ہو جائے

تیز تر روشنی مشعلِ ایماں ہو جائے

 

اس کی سیرت پہ نہ کیوں آدمی حیراں ہو جائے

از ہمہ پہلو جو ہم صورتِ قرآں ہو جائے

 

پیروِ دینِ مبیں کاش کہ انساں ہو جائے

یہ خزاں دیدہ چمن پھر سے گل افشاں ہو جائے

 

دن پھریں جام چلے، کیف کا ساماں ہو جائے

نگہِ لطفِ دِگر ساقی دوراں ہو جائے

 

حسنِ صورت میں کشش وہ ہے کہ سبحان اللہ

نقش گر آپ ہی انگشت بدنداں ہو جائے

 

ہاں رہے گا یونہی وقفِ غم و آلام و فغاں

جب تک انساں نہ غلامِ شہِ شاہاں ہو جائے

 

تب سمجھنا کہ تجھے لذّتِ ایماں ہے نصیب

جب وہ محبوبِ خدا حاصلِ ایماں ہو جائے

 

جب گناہوں کی طرف لغزشِ پا ہو مائل

لاج آ آ کہ تری مانعِ عصیاں ہو جائے

 

مغفرت کا مری امکان کوئی اور نہیں

بس یہی ہے کہ شہا آپ کا احساں ہو جائے

 

آ گیا شہرِ طرب، شہرِ بہاراں نزدیک

عین ممکن ہے کہ اب درد کا درماں ہو جائے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات