مدحـــــتِ ختمِ رسل اور زبانِ بســــــملؔ

مدحـــــتِ ختمِ رسل اور زبانِ بســــــملؔ

اک گـــــناہ گار کی یہ حوصلہ افـزائی ہے

ایسا عاصی نہ ملے جس کا ٹھکانہ بسملؔ

اُس نے دامنِ محمدﷺ میں جگہ پائی ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

جس در سے کوئی شاہ و گدا خالی نہ لوٹا
کیوں طبعیت خود بخود ہے گھبرائی ہوئی
دنیا فانی ہے اہلِ دنیا فانی
اُنؐ کو ہر دم دھیان میں رکھنا
درِسرکارؐ تک پہنچا ہوں جب سے
واہ کیا شانِ مصطفائی ہے
مرے مولا مجھے دل شاد رکھنا
فغانِ خادمِ ناشاد سُن لیں
یوں نہ بنایا قادرِ مطلق خالق نے ان کا سایہ
’’میرے ہر زخمِ جگر سے یہ نکلتی ہے صدا‘‘