اردوئے معلیٰ

Search

مدینے میں رکھو ہلکی صدا تک

یہاں آہستہ چلتی ہے ہوا تک

 

جہانِ عقل حیرت میں ہوا گم

پڑھا وَالنَّجم کو جب مَا طَغٰی تک

 

لگا لے ان کی خاکِ پا کا سرمہ

کتابِ لوح پھر اے چشمِ وا ! تَک

 

مجھے ہے ربط گیسوئے نبی سے

مِری جانب نہ اے رنج و بلا ! تَک !

 

تمہاری ملک سے شاہِ ” دَنا ” ! کچھ

ہے از تحت الثریٰ عرشِ علیٰ تک

 

رہا کربل میں یوں پاسِ شریعت

نہ اتری سر سے زینب کے رِدا تک

 

نہیں ہے فاصلہ کچھ بھی معظمؔ

درِ احمد سے دربارِ خدا تک

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ