اردوئے معلیٰ

Search

مدینے کو مسافر جا رہے ہیں

مقدر پہ بہت اترا رہے ہیں

 

بیاں اشکوں سے حالِ دل ہے اپنا

مزہ ہم حاضری کا پا رہے ہیں

 

خوشی میں چومتے ہیں سنگِ اسود

مقدر پہ بہت اترا رہے ہیں

 

ملا ہے سرمۂ خاکِ مدینہ

اسے آنکھوں میں ہم لگوا رہے ہیں

 

فرشتے بزمِ نورانی میں آ کر

مزہ ذکرِ نبی کا پا رہے ہیں

 

بچھا دیں راہ میں ہم ان کی پلکیں

مدینے جا کے مومن آ رہے ہیں

 

بنا کر آئینہ ہم اپنے دل کو

فداؔ جلوے نبی کے پا رہے ہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ