اردوئے معلیٰ

Search

مدینے کی فضائیں مِل گئیں دل کو قرار آیا

مقدر اَوج پر ہے آج مجھ کو اعتبار آیا

 

غموں کے چھٹ گئے بادل ہوئی تاریکیاں رُخصت

گھٹا رحمت کی جب برسی تو پھر کھل کر نکھار آیا

 

مہک اٹھا چمن دل کا خوشی کے کھل گئے غنچے

مرے اجڑے ہوئے گلزار میں موسم بہار آیا

 

تمنائیں مچلتی تھیں بکھرتی تھیں جو سینے میں

سمٹ کر ہوگئیں یکجا وہ جب ان کا دیار آیا

 

کئے پھر شکر کے سجدے عقیدت سے لئے بوسے

کہ اُن پیارے در و دیوار پر جی بھر کے پیار آیا

 

کرم سے جھولیاں بھر لیں خزانے ناز نے لوٹے

مرے کاسے میں حصہ خیر کا بھی بے شمار آیا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ