اردوئے معلیٰ

مدینے کی فضا ہے اور میں ہوں

مدینے کی فضا ہے اور میں ہوں

مرا بختِ رسا ہے اور میں ہوں

 

تصور میں سنہری جالیاں ہیں

عطائے مصطفی ہے اور میں ہوں

 

پرِ روح الامیں لگ جائیں مجھ کو

بلاوا آپ کا ہے اور میں ہوں

 

جھکا ہے سر نبی کے آستاں پر

یہی صبح و مسا ہے اور میں ہوں

 

عبادت ہی عبادت ہو رہی ہے

شہِ دیں کی ثنا ہے اور میں ہوں

 

مجھے معراج حاصل ہو رہی ہے

نبی کا نقشِ پا ہے اور میں ہوں

 

چمک اٹھی ہے قسمت میری آصف

کرم سرکار کا ہے اور میں ہوں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ