اردوئے معلیٰ

Search

مرا وظیفہ مرا ذکر اور شعار درود

میں پیش کرتی ہوں آقا کو بے شمار درود

 

اُگے ہیں مزرع جاں میں سلام کے پودے

ریاضِ زیست کی ہے دائمی بہار درود

 

کبھی جو رنج و الم بے بسی نے گھیرا ہے

نجات مل گئی بھیجا جو ایک بار درود

 

بلند ہوتے ہیں درجے کہ جب بھی ورد کریں

ہے مومنوں کی یہ معراج اور وقار درود

 

بغیر اس کے دعائیں ہیں بے اثر ساری

ہوئی قبول دعا جب بھی کیا حصار درود

 

اگر ہے ناز گماں تیرگی کا آنگن میں

تو جان و دل سے پڑھو ان پہ نُور بار درود

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ