اردوئے معلیٰ

Search

مرا کل بھی تیرے ہی نام تھا مرا کل بھی تیرے ہی نام ہو

مرے لب پہ کل بھی درود تھا مرے لب پہ کل بھی سلام ہو

 

ترا نام راحتِ جان تھا ترا نام راحتِ جاں رہے

مری زندگی کا ورق ورق ترے نام پر ہی تمام ہو

 

ترا ذکر و فکر ہی یا نبی رہے میرا حاصلِ زندگی

ترا ذکر ہی مری صبح ہو، ترا ذکر ہی مری شام ہو

 

مری خواہشیں مری کاوشیں مری حسرتیں مری یافتیں

ترے نام ہی سے جڑی رہیں مجھے اور کوئی نہ کام ہو

 

ترا نام فکرو نظر رہے مجھے اور کچھ نہ خبر رہے

ترا نام حرف و بیان ہو، ترا نام نطق و کلام ہو

 

تری یاد سے مری جاں میں جاں تری یاد سے مرے دم میں دم

ہو بدن سے روح یہ جب جدا تو مدینہ اُس کا مرام ہو

 

تری چاکری میں ہو عمر بھر یہ ترا فقیر ترا ظفر

مرا بیٹا بھی تو مرے کریم غلام ابنِ غلام ہو

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ