مرجان نہ یاقوت نہ لعلِ یمنی مانگ

 

مرجان نہ یاقوت نہ لعلِ یمنی مانگ

اللہ سے جذبات اویسِ قرنی مانگ

 

محشر کی تمازت سے نجات آج ہی پالے

اس گیسوئے رحمت کی ذرا چھاؤں گھنی مانگ

 

اس سے بڑی نعمت نہیں کونین میں کوئی

سرکار سے سرکار کی بس ہم وطنی مانگ

 

گم ُسم تھا درِ شہ پہ کہا آکے کسی نے

قسمت سے یہ موقع ملا قسمت کے دھنی مانگ

 

مانگے گا تو جتنا بھی سوا پائے گا اس سے

دنیا میں ہے بس اک یہی دربار غنی مانگ

 

واللہ کہ ہر نعمتِ کونین ملے گی

تو صدقہ سرکارِ ُحسینی َحسنی مانگ

 

لطف اور بھی آئے گا صبیحؔ اُن کی ثنا کا

حسّان سے حسّان کی شیریں سخنی مانگ

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ