مرحبا سید مکی مدنی العربی

مرحبا سید مکی مدنی العربی

دل و جاں باد فدایت چہ عجب خوش لقبی

 

من بیدل بجمال تو عجب حیرائم

اللہ اللہ چہ جمال است بدیں بوالمجبی

 

نسبت نیست بذات تو بنی آدم را

بہتر از عالم و آدم تو چہ عالی نسبی

 

نسبت خود بسگت کردم و بس منفعلم

زانکہ نسبت بدگے کوئے تو شد بے ادبی

 

ذات پاک تو چو در ملک عرب کرو ظہور

زاں سبب آمدہ قرآں بزبان عربی

 

عاصیا نیم زمانیکی اعمال مپرس

سوئے ماروئے شفاعت بکن از بے سببی

 

چشم رحمت بکشا، سوئے من انداز نظر

اے قریشی لقب و ہاشمی و مطلبی

 

نخل بستان مدینہ ز تو سرسبز مدام

زاں شدہ شہرہ آفاق بہ شیریں رطبی

 

ما ہمہ تشنہ لبانیم توئی آب حیات

لطف فرما کہ زحدمی گزرد تشنہ لبی

 

شب معراج عروجے تو زا فلاک گذشت

بمقامے کہ رسیدی نرسد ہیچ نبی

 

سیدی انت حبیبی و طبیب قلبی

آمدہ سوئے تو قدسی پئے درماں طلبی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

چمنِ طیبہ میں سنبل جو سنوارے گیسو
وہ سرور کشور رسالت جو عرش پر جلوہ گر ہوئے تھے
وہ نبیوں میں رحمت لقب پانے والا
دل میں اترتے حرف سے مجھ کو ملا پتا ترا
تیرا مجرم آج حاضر ہو گیا دربار میں
میں کبھی نثر کبھی نظم کی صورت لکھوں
نہ زہد و اتقا پر ہے نہ اعمالِ حسیں پر ہے
ہر درد کی دوا ہے صلَ علیٰ محمد
یہی عرفان ہستی ہے یہی معراج انساں کی
تکتی رہتی ہیں رہِ طیبہ مسلسل آنکھیں