مری جاں میں سمایا عشقِ محبوبِ خدا ہے

مری جاں میں سمایا عشقِ محبوبِ خدا ہے

مرا محبوب ہے وہ جو حبیبِ کبریا ہے

ظفرؔ وہ ہی مسیحائے ہمہ مُردہ دِلاں ہے

مریضِ جاں بلب کو بھی وہی دیتا شفا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

شعور ِ ہست میں ڈھل کر ، شعار ِ آگہی بن کر
سوالی
شاہِ بطحا سے پیار مانگے ہے
رنگ تقدیر کے بدلتے ہیں
میں آپؐ کے در کا ہوں گداگر شہِ والا
میں اِک مسکیں گداگر اُنؐ کے در کا
ثنائے کبریا دِن رات لکھوں
جمال دید سے مسرُور رکھنا
’’رضائےؔ خستہ جوشِ بحرِ عصیاں سے نہ گھبرانا‘‘
’’گرفتارِ بلا حاضر ہوئے ہیں ٹوٹے دل لے کر‘‘