اردوئے معلیٰ

Search

مری حیات کا گر تجھ سے انتساب نہیں

تو پھر حیات سے بڑھ کر کوئی عذاب نہیں

 

امڈ رہی ہیں اگر آندھیاں تو کیا غم ہے

کہ میرا خیمہِ ایمان بے طناب نہیں

 

ترے کمالِ مساوات کی قسَم ہے مجھے

کہ تیرے دیں سے بڑا کوئی انقلاب نہیں

 

ندیم پر ترے احساں ہے اس قدر جن کا

کوئی شمار نہیں ہے کوئی حساب نہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ