اردوئے معلیٰ

Search

مری خامیاں تو ہزار ہیں

مگر ایک بات ہے فخر کی

مگر ایک بات ہے ناز کی

مجھے اِک شرف تو نصیب ہے

مجھے دینِ حق کا شعور ہے

یہ شرف تو مجھ کو نصیب ہے

کہ جو میرے رب کا حبیب ہے

وہی میرے دل کے قریب ہے

 

مری خامیاں تو ہزار ہیں

مگر ایک بات ہے فخر کی

مگر ایک بات ہے ناز کی

کہ میں ایسے شہہ کا غلام ہوں

کہ جو کُل جہاں کا رسول ہے

جو ہر اِک زماں کا رسول ہے

جو پیام اس نے دیا ہمیں

وہی زندگی کا پیام ہے

یہ شرف تو مجھ کو نصیب ہے

کہ وہ عہد میں نے بھی پا لیا

جو ہے عہدِ احمدِ مجتبیٰ

وہ جو رحمتوں کا رسول ہے

مدنی بھی ہے قرشی بھی ہے

وہ زمیں زماں کا نبی بھی ہے

جو رسول بھی ہے حبیب بھی

ہے وہی دلوں کے قریب بھی

 

مرا عہد بھی وہی عہد ہے

ہے جو عہدِ احمدِ مجتبیٰ

کئی انبیاء کی مراد تھی

کہ یہ عہد ان کو نصیب ہو

جسے رحمتوں کے نزول نے

جسے رنگ رنگ کے پھول نے

بڑا خوشنما ہے بنا دیا

کہ جو داغ تھا دلِ دہر میں

اُسے صاف رَبّ نے مٹا دیا

اُسی رحمتوں کے رسول کو

اُسی کائنات کے پھول کو

مرے باغِ جاں میں سجا دیا

ہے جو آگہی کا پیامبر

ہے جو روشنی کا پیامبر

ہے وہ زندگی کا پیامبر

وہ متاعِ دیں مجھے مل گئی

مرے رب کو بھی جو پسند ہے

 

مجھے مل گیا وہ حبیب بھی

مجھے ہو گیا وہ نصیب بھی

جو رسول ہے مرے عہد کا

جو نبی زمین و زماں کا ہے

وہ رسول کون و مکاں کا ہے

وہ جو رحمتوں کا رسول ہے

جو بہارِ جاں کا بھی پھول ہے

 

مجھے نعمتیں یہ عطا ہوئیں

مجھے رفعتیں یہ عطا ہوئیں

کہ میں اس کے دین میں آ گیا

مری روح کے وہ جو زخم تھے

مرا چارہ گر وہ مٹا گیا

مرے راہبر پہ سلام ہو

مرے رہنما پہ درود ہو

مرے راہبر پہ صلوٰۃ ہو

مرے رہنما پہ سلام ہو

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ