اردوئے معلیٰ

مرے آقا تشریف لائیں گے اِک دِن

مرے قلب و جاں میں سمائیں گے اِک دِن

 

میں بے آسرا، بے نوا، دربدر ہوں

مجھے اپنے در پہ بلائیں گے اِک دِن

 

سخی در وہ ایسا ہے جس در سے، مُجھ سے

سگِ در بھی خیرات پائیں گے اِک دِن

 

وہ روضۂ اطہر، وہ محراب و منبر

فقیروں کو آقا دکھائیں گے اِک دِن

 

اُنھی سے میں مانگوں محبت اُنھی کی

مری التجا مان جائیں گے اِک دِن

 

اُتر جائیں گے بحرِ عشق نبی میں

نشاناتِ دوئی مٹائیں گے اِک دِن

 

بوقتِ نزع آپ کی دید ہو گی

ظفرؔ! غمزدہ مسکرائیں گے اِک دِن

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات