اردوئے معلیٰ

مرے عرضِ مدعا میں کوئی پیچ و خم نہیں ہے

وہ سمجھ کے بھی نہ سمجھیں تو یہ کیا ستم نہیں ہے

 

مرے دل میں غم ہزاروں مگر آنکھ نم نہیں ہے

یہ زمانہ کیسے مانے جو ثبوتِ غم نہیں ہے

 

خلش، اضطراب و شورش کہ غم و الم نہیں ہے

بہ طفیلِ عشق یعنی مجھے کیا بہم نہیں ہے

 

زنقوشِ یادِ رنگیں گل و گلستاں کا عالم

مرے دل میں ہے جو نقشہ وہ ارم ارم نہیں ہے

 

دمِ نزع روئی مجھ سے مری بے کسی لپٹ کر

مجھے مرگِ ناگہاں بھی یہ سکوں بہم نہیں ہے

 

کسے رہنے دوں، بچاؤں کسے تیرِ غم کی زد سے

یہ جگر ہے، یہ مرا دل مجھے کوئی کم نہیں ہے

 

نظرؔ ایک شرط ہے بس کہ ملے بہ دستِ ساقی

میں ہزار جام پی لوں مجھے کچھ قسم نہیں ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات