اردوئے معلیٰ

Search

 

مرے لبوں پر کسی گھڑی جب ثنائے خیر الانام آئے

زمیں سے پیغام تہنیت کا فلک سے مجھ کو سلام آئے

 

وہ راحتِ جانِ آمنہ جب بہ ارضِ بیت الحرام آئے

جھلک ذرا دیکھنے کو ان کی پرائے اپنے تمام آئے

 

بہ شکلِ نوری، بچشمِ میگوں، بہ قلبِ اطہر، بہ خلقِ احسن

نبی عالی مقام آئے رسوالِ والا کرام آئے

 

نبی صادق، نبی کامل، نبی خاتم، نبی رحمت

وہ آئے دنیا میں اس ادا سے کہ سب کے بن کر امام آئے

 

زمانہ پڑھتا ہے اس کا کلمہ زمانہ حلقہ بگوش اس کا

جو کام آیا یہاں پہ سب کے جو روزِ محشر میں کام آئے

 

اس آفتابِ ہدیٰ کی کرنوں کی فیض بخشی کا کیا ٹھکانہ

جو ذرے محفل میں اس کی ٹھہرے وہ بن کے ماہِ تمام آئے

 

اسی کی ہے ذاتِ پاک ایسی کہ جس کی خدمت میں لحظہ لحظہ

تمام دنیا سے امتی کا درود پہنچے سلام آئے

 

جو اس کے دامن کو چھوڑ بیٹھی ہے مبتلائے عذاب دنیا

خدائے قادر وہ دن دکھائے کہ اس کے دیں کا نظام آئے

 

اسی نے ایماں کا نخل اگایا وہ ابرِ رحمت ہی بن کے چھایا

تمام دنیا پہ ہے یہ روشن وہ ساری دنیا کے کام آئے

 

خدا کرے میں نظرؔ سے اپنی وہ سر زمینِ حجاز دیکھوں

جہاں سرورِ سجود حاصل جہاں پہ لطفِ قیام آئے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ