اردوئے معلیٰ

Search

مرے لب پر شہِ بطحا کی نعتوں کے ترانے ہیں

بڑا مسرور ہے دل بھی یہ پل کتنے سہانے ہیں

 

اُنہی کے ذکر سے ساری بہاریں لوٹ آتی ہیں

بڑی پُر نور گھڑیاں ہیں بڑے رنگیں زمانے ہیں

 

یہی چاہت ہے مدت سے کبھی ہو جائے گی آمد

درودِ پاک کے گجروں سے اپنے گھر سجانے ہیں

 

ازل سے ہی سہارا ہے مجھے آقا کی یادوں کا

خوشا میرے بھی دامن میں محبت کے خزانے ہیں

 

انہی کے نام سے ہی نور کی خیرات ملتی ہے

یہ پیارا نام لے کر ہی نصیب اپنے جگانے ہیں

 

گزر جائے حیاتِ ناز سب آقا کی مدحت میں

عقیدت کے حسیں موتی مجھے چن چن لٹانے ہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ