اردوئے معلیٰ

Search

مرے ویراں نگر میں بھی مرے آقا بہار آئے

ترے در پر اگر پہنچوں تو اس دل کو قرار آئے

 

درِ اقدس کا یہ اسلوب ہر عالم نے دیکھا ہے

خوشی سے جھومتے لوٹے ہیں جو بھی اشکبار آئے

 

نہ گبھراؤ نہ شرماؤ کہو ’’اَدْرِکْنِی‘‘ اے آقا

یہ در ایسے سخی کا ہے جسے منگتوں پہ پیار آئے

 

پناہِ بے کساں ہو اِس لیے ہر ایک مشکل میں

تمہارا نام ہی لب پر سدا بے اختیار آئے

 

رہا ہر حال میں تیرا کرم سایہ فگن مجھ پر

پریشانی کے عالم زندگی میں تو ہزار آئے

 

خدا نے کہہ کے ’’جاؤکَ‘‘ تمہارے در پہ بھیجا ہے

کرم ہو زندگی ہم بھی گناہوں میں گزار آئے

 

تمہاری دید کی ہر دور میں خیرات بٹتی ہے

کوئی نظروں کو پاکیزہ کرے دل کو سنوار آئے

 

ہے سب ممکن جو تم چاہو کرو منظوریاں ایسی

تیرے دربارِ عالی پر یہ احقر بار بار آئے

 

وفا کے نام لیوا عشق کے داعی ذرا سن لیں

اسے صدیقؓ کہتے ہیں جو ہر شے اُن پہ وار آئے

 

حیا آقا کی سیرت کا رہے پیشِ نظر ہر دم

ترے کردار میں بھی اے شکیلؔ ایسا نکھار آئے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ