اردوئے معلیٰ

Search

مشکل ہوئی اب جینے کی تدبیر شہِ دیں

ہے آپ کے ہاتھوں ہی میں تقدیر شہِ دیں

 

نفرت ہے عداوت ہے تکبّر ہے حسد ہے

معدوم ہوئی خُلْق کی توقیر شہِ دیں

 

ہو جائے جو ابرو کا سکوں بار اشارہ

کٹ جائے گی آلام کی زنجیر شہِ دیں

 

کیوں قتل ہوئے سامنے بچوں کے وہ اپنے

کیا ظلم ہے یہ خون کی تحریر شہِ دیں

 

اب کون یہاں ظالم و قاتل کو سزا دے

اندھی ہوئی قانون کی تعزیر شہِ دیں

 

پڑ ھتا ہو ں درود آپ پہ امید یہ لے کر

پا جائے سکوں مجھ سا بھی دل گیر شہِ دیں

 

ہو سیّدِ ہجویر کے اس دیس پہ رحمت

ہو جائے فنا جبر کی تزویر شہِ دیں

 

فریاد ہے نوری کے لبوں پر مرے آقا

مومن نہ کوئی ہو کبھی دلگیر شہِ دیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ