مصطفٰے شانِ قدرت پہ لاکھوں سلام

مصطفٰے شانِ قدرت پہ لاکھوں سلام

اولیں نقشِ خلقت پہ لاکھوں سلام

 

قائلِ وحدہٗ لاشریک لہٗ

ماحی بدعت پہ پہ لاکھوں سلام

 

بھیڑ میں چوم لیں شاہ کی جالیاں

اے نظر تیری ہمت پہ لاکھوں سلام

 

کس کی چوکھٹ پہ دے رہا ہے تو صدا

اے گدا تیری قسمت پہ لاکھوں سلام

 

ان کی آمد کا سن کر جو ہوگا بپا

ایسے شورِ قیامت پہ لاکھوں سلام

 

چار یارانِ حضرت پہ ہر دم درود

ان کے دورِ خلافت پہ لاکھوں سلام

 

شاہِ بغداد غوث الورٰی محیِ دیں

آبروئے طریقت پہ لاکھوں سلام

 

کیجیے بند آنکھیں نصیرؔ اور پھر

بھیجیے ان کی صورت پہ لاکھوں سلام

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ