مطلعِ نعت ہے سب زورِ بیاں ہے خاموش

 

مطلعِ نعت ہے سب زورِ بیاں ہے خاموش

دل دھڑکتا ہی نہیں اور زباں ہے خاموش

 

نامۂ زیست خسارہ ہی خسارہ تھا مگر

روبرو آپ کے ہر ایک زیاں ہے خاموش

 

جوشِ رحمت ہے نرالا سرِ محشر ان کا

جائے وحشت میں جہاں جسمِ اماں ہے خاموش

 

جب سے دیکھا ہے ترے گنبدِ اخضر کو شہا

آنکھ پتھرا سی گئی سارا سماں ہے خاموش

 

غرفۂ ہجر میں ہو نور کی بارش آقا

ساتھ میرے یہ مرا ہجر مکاں ہے خاموش

 

نوری پیزاروں تلے آ کے فروزاں جو ہوئی

دیکھ کر خاکِ حرم فرشِ جناں ہے خاموش

 

اڑتا پھرتا تھا یہ دل برگِ بریدہ کی طرح

مزرعِ دل پہ کھلی نعت خزاں ہے خاموش

 

مدحتِ حسنِ مکمل میں قلم خم ہے مرا

نعت کہنے سے ہی یہ قلبِ تپاں ہے خاموش

 

بابِ مدحت پہ یہ منظرؔ ہے کھڑا کاسہ بکف

سر خمیدہ یہ ترا عرض کناں ہے خاموش

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ