اردوئے معلیٰ

Search

منشائے رسالت کا ہُوا جیسے اشارہ

مہتابِ ضیا بار نے دل کر لیا پارہ

 

رہتا ہُوں بہَر طَور ترے دستِ اماں میں

احساس ہے گرداب تو مدحت ہے کنارہ

 

کھِلتے نہیں رنگوں کے مناظر سرِ حیرت

قائم ہے ترے گنبدِ اخضر کا اجارہ

 

میزان میں رکھ کر مری نعتِ شبِ ہجراں

پُورا کیا آقا نے مرا سارا خسارہ

 

یکسر ہیں الگ اُس درِ رحمت کے قرینے

ہر چند کہ ہے جُودِ مکرّر کا نظارہ

 

برسائے گا جب ابرِ کرم وصل کا جھالا

بجھ جائے گا پھر آتشِ فرقت کا شرارہ

 

ملتی ہے ترے گھر سے ہی خیرات کرم کی

ہوتا ہے ترے در پہ ہی ہر درد کا چارہ

 

اُمید رکھیں کس سے، کریں کس سے تمنا

جب تیرے ہی ٹکڑوں پہ ہے، خوب اپنا گزارہ

 

آئے گا ضیا بخش بُلاوا ترے در سے

چمکے گا بڑے ڈھب سے مقدر کا ستارہ

 

تا حشر دِکھائے گا رہِ رُشد و ہدایت

اے ختمِ رُسُل ! تیری رسالت کا منارہ

 

مقصودؔؔ شبِ رحمتِ میلاد کے صدقے

مطروب ہُوا یابسہ، ٹھنڈا ہُوا حارہ

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ