اردوئے معلیٰ

Search

مومن وہی ہے ان سے جو عہد وفا کرے

جاتی ہے جان جائے محبت کیا کرے

 

ہو جس کے دل میں نُورِ نبوّت کی روشنی

کیوں کر نمازِ عشقِ محمد قضا کرے

 

ان کی گلی میں جس کو ہے جانے کی آرزو

ہلکوں سے اپنی تنکے بھی جاکر چُنا کرے

 

عرفان و آگہی کے افق اس پہ وا بھی ہوں

جو بابِ شہر علم پہ آ کر صدا کرے

 

جا کر مدینے لوٹ کے آئیں نہ ہم وطن

وا حسرتا یہ زندگی ہم سے وفا کرے

 

شیخ حرم کا دعویٰ عشقِ نبی بجا

لیکن ہے فرض اجرِ رسالت ادا کرے

 

آقا بلائیں، جائیں گے ہم سر کے بل حسن

راہِ وفا میں ہوتا ہے جو بھی ہوا کرے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ