اردوئے معلیٰ

Search

مہک میں رب نے بسائے ، رسول کے گیسو

کہ مشک و گل کو ہیں بھائے ، رسول کے گیسو

 

عیاں ہے جمعِ نقیضینِ روز و شب کا سماں

” رُخِ رسول پہ آئے، رسول کے گیسو “

 

سَحابِ رحمتِ رَبِّ قدیر کی صورت

تمام خلق پہ چھائے، رسول کے گیسو

 

گھٹا کہوں کہ شبِ تار ، تم کو ، حیراں ہوں

ہیں گنگ سارے کِنائے، رسول کے گیسو !

 

اسے ڈَسا نہیں پھر مارِ رنج و غم نے کبھی

ہیں جس کے ہاتھ میں آئے، رسول کے گیسو

 

بندھا ہے تارِ رگِ جانِ عالَمیں ان سے

کنڈل جبھی ہیں بنائے ، رسول کے گیسو

 

انہیں نہ مارِ سِیَہ کہہ ! کہ ہے ادب کے خلاف

اگرچہ شانوں پہ آئے ، رسول کے گیسو

 

اسے ستائے نہ خورشید حشر کی گرمی

تمہارے جس پہ ہوں سائے، رسول کے گیسو !

 

دُھلے گی پل میں معظمؔ سیاہی عِصیاں کی

اگر برسنے پہ آئے ، رسول کے گیسو

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ