اردوئے معلیٰ

میری پہچان ہے سیرت اُن کی

میری پہچان ہے سیرت اُن کی

میرا ایمان ! محبت اُن کی

 

آج ہم فلسفہ کہتے ہیں جسے

وہ مساوات تھی عادت اُن کی

 

فتحِ مکہ ، مرے دعوے کی دلیل

عدل کی جان ، عدالت اُن کی

 

حرفِ اَتمَمْتُ عَلَیْکُم ہے گواہ

حُسنِ تکمیل ہے بعثت اُن کی

 

میں کہ راضی بہ رضائے رب ہوں

کوئی حسرت ہے تو حسرت اُن کی

 

وقت اور فاصلہ برحق لیکن

میرا فن کرتا ہے بیعت اُن کی

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ