اردوئے معلیٰ

Search

نعتِ سرور ہے شاعری میری

یوں ہی گزری ہے زندگی میری

 

تک رہا تھا میں سبز گنبد کو

’’دفعتاً آنکھ کھل گئی میری‘‘

 

دید ہو جائے سر کی آنکھوں سے

بڑھتی جاتی ہے تشنگی میری

 

دل یہ کہتا ہے دیکھ کر طیبہ

ختم ہوگی یہ بے کلی میری

 

خود اُنہی کو سنائے گی جا کر

چشمِ بے چین کی نمی میری

 

روضہ دیکھا ہے بار ہا گرچہ

پیاس لیکن نہیں بجھی میری

 

کاش ہوتی جلیل قبلِ اجل

کوئے طیبہ میں حاضری میری

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ