اردوئے معلیٰ

Search

نعت لکھتے ہوئے اِک مدحً سرا کیف میں ہے

کوچہِ دل کی فضا یعنی جدا کیف میں ہے

 

میرے نسخے میں تری دید لکھی ہے گویا

مجھ سے پہلے مرا مکتوبِ شفا کیف میں ہے

 

آپ آئیں تو کہے گا مرے بارے میں جہاں

یہ وہ خوش بخت ہے جو وقتِ قضا کیف میں ہے

 

دل ہے سرشار ترا ہو کے مرے بندہ نواز

جان ہو کر تری عزت پہ فدا کیف میں ہے

 

یہ ہے ذکرِ درِ طیبہ سے تعلق کا اثر

دل اگر کیف میں ہے ، لوگو بجا کیف میں ہے

 

دیکھ کر خاکِ درِ یار کی فطری رنگت

ریشم و پنکھڑئ و رنگِ حنا کیف میں ہے

 

یہ ہے زھراء کا عطا کردہ حیاء کا تمغہ

یہ سمجھتے ہوئے ہر سر پہ ردا کیف میں ہے

 

کیوں نہ ہو فتح و ظفر حضرتِ حیدر پہ فدا

لے کے خیبر کا علم شیرِ خدا کیف میں ہے

 

تیرے بچوں کی فقیری ہے تبسم کا نصیب

اِس پہ سب کچھ مرے شیطاں کے سوا کیف میں ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ