نیند آتی کہاں ہے آنکھوں میں

نیند آتی کہاں ہے آنکھوں میں

رات ہر دم جواں ہے آنکھوں میں

 

ہونٹ تو مسکراتے رہتے ہیں

دولتِ غم نہاں ہے آنکھوں میں

 

وہ بظاہر ذرا نہیں بدلی

اجنبیت عیاں ہے آنکھوں میں

 

ڈار سے کونج کوئی بچھڑی ہے

وحشتوں کا سماں ہے آنکھوں میں

 

ہم جہاں روز چھپ کے ملتے تھے

وہ کھنڈر سا مکاں ہے آنکھوں میں

 

آنکھوں آنکھوں میں ہوتی ہیں باتیں

نقش گویا زباں ہے آنکھوں میں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ