اردوئے معلیٰ

Search

وراء گماں سے ہے عظمت حسینِ اعظم کی

کہ روحِ دیں ہے مودّت حسین اعظم کی

 

عطا ہوئی ہیں سبھی نعمتیں بنامِ حسین

نفَس نفَس ہے عنایت حسینِ اعظم کی

 

نبی کے دین کو اپنا لہو بھی نذر کیا

وفا شعار ہے عترت حسینِ اعظم کی

 

فنا کے ہاتھ کبھی اسکو چھو نہ پائیں گے

ہے لازوال حکومت حسینِ اعظم کی

 

کلی کے حسن میں پرتو حسین اعظم کا

گلوں کے لب پہ ہے مدحت حسینِ اعظم کی

 

جنودِ شام کا اک بھی جواں نہ بچ پاتا

جوہوتی جنگ ہی غایت حسینِ اعظم کی

 

مزاج سیل غم و رنج کا بدل ڈالا

ہے کوہ قاف سی ہمت حسین اعظم کی

 

دل و نگاہ نے کی ہے بصد خلوص و وفا

ازل کے روز سے بیعت، حسین ِاعظم کی

 

جو دین پاک کے چہرے کا بن گئی غازہ

وہ بالیقیں ہے شہادت حسین اعظم کی

 

صدف جو آلِ پیمبر کا غم ہے سینے میں

ہے مجھ پہ خاص عنایت، حسینِ اعظم کی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ