اردوئے معلیٰ

وسیلہ چاہیے گر عمرِ جاوداں کے لیے

وظیفہ کیجیے لازم ثنا ، زباں کے لیے

 

سبھی کو چادرِ رحمت میں ڈھانپ رکھا ہے

پُکارا جس نے بھی محشر میں سائباں کے لیے

 

حضور آپ کے جیسا شفیع ہوتے ہوئے

کسی کی سمت نہ جائیں گے ہم اماں کے لیے

 

مت اپنا نام نہ لینے کا حکم دیں اِس کو

سزا یہ سخت ہے اس نطقِ ناتواں کے لیے

 

ثناے شاہِ مدینہ رواں ہے ہونٹوں پر

براے تحفہ جو لائے ہیں مہرباں کے لیے

 

ہمارے پاس بجز عشق اور کچھ بھی نہیں

یہی ہے زادِ سفر پاس اس جہاں کے لیے

 

بغیر اس کے عبث ہے قمرؔ بہارِ سخن

گلِ درود ہے لازم ہر اک دہاں کے لیے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات