اردوئے معلیٰ

وہی ہم اہلِ خطا کو نبی سے ملتا ہے

شبِ سیاہ کو جو روشنی سے ملتا ہے

 

گدازِ قلب ہر اک شخص کو نصیب کہاں

یہ فیض نسبتِ حبِ نبی سے ملتا ہے

 

وہ ذاتِ پاک کہ جن کا نہیں کوئی سایہ

سروں کو سایہء رحمت انہی سے ملتا ہے

 

نبی کی یاد سے کرتے ہیں ہم رفو شاعر

جو کوئی زخم ہمیں زندگی سے ملتا ہے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات