اردوئے معلیٰ

پر خار زندگی کو پھر پُر بہار کر دو

 

پُر خار زندگی کو پھر پُر بہار کر دو

عرفاں کی مے کا طاری کیف و خمار کر دو

اپنے غلامِ در میں مجھ کو شمار کرکے

دریائے گمرہی سے سرکار پار کر دو

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ