اردوئے معلیٰ

Search

چومیں گے لبِ دل سے طیبہ کی زمیں جا کر

آئے گا قرار اب تو اِس دل کو وہیں جا کر

 

وہ ارض کہ جو رشکِ فردوسِ بریں ٹھہری

دیکھیں گے زہے قسمت ہم بھی وہ زمیں جا کر

 

آنکھیں ہیں کہ شرمندہ ، دل ہے کہ بڑا نادم

کس کس کو سنبھالوں گا آقا کے قریں جا کر

 

قرآنِ مبیں اکثر سنتے تھے سناتے تھے

دربارِ شہِ دیں میں جبریلِ امیں جا کر

 

غیروں کی سمجھ میں یہ آیا ہے نہ آئے گا

اکِ رات میں ہو آئے وہ عرشِ بریں جا کر

 

اللہ نے چاہا تو ہم بھی وہاں جائیں گے

بڑھ جاتا ہے جس در پر ایمان و یقیں جا کر

 

مٹی کا بدن راغب مٹ جائے تو اچھا ہے

سرکارِ دو عالم کی گلیوں میں کہیں جا کر

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ