اردوئے معلیٰ

Search

چہک رہا ہے مرا مقدر کہ مصطفیٰ کے دیار میں ہوں

درود لب پر جھکی ہیں نظریں میں رحمتوں کے حصار میں ہوں

 

حرم کے جلووں کی جگمگاہٹ نظر سے دل میں اتر رہی ہے

فرشتے گھیرے ہوئے ہیں مجھ کو میں گوشۂ نور بار میں ہوں

 

دعائیں مقبول ہو رہی ہیں اور اشک بھی رنگ لا رہے ہیں

سخی کی دہلیز پر کھڑی ہوں گدا گروں کی قطار میں ہوں

 

وہ ہجر کے دن بہت کٹھن تھے خوشا کہ پوری ہوئی تمنا

وصال کے پل بہت حسیں ہیں میں خوب کیف و قرار میں ہوں

 

ہنر ہے مجھ میں نہ کوئی خوبی بس ان سے نسبت کا آسرا ہے

جو رشکِ خلدِ بریں ہوا ہے میں اس حسیں لالہ زار میں ہوں

 

کچھ ایسے اسباب ہو گئے ہیں کہ ناز کی حاضری ہوئی ہے

حضور کی بندہ پروری ہے کہ ان کے قرب و جوار میں ہوں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ