اردوئے معلیٰ

Search

کس قدر ہے دلنشیں اور جاں فزا مت پوچھیے

اس دیارِ نور کا گنبد ہرا مت پوچھیے

 

کیا نظارہ تھا کہ جب اک ہالۂ رحمت میں تھے

سیدہ حسنین اور شیرِ خدا مت پوچھیے

 

کارِ مدحِ مصطفیٰ سے بات میری بن گئی

دستِ آقا سے مجھے کتنا ملا مت پوچھیے

 

بھیجیے اپنے کریم آقا پہ روز و شب درود

اور درودِ پاک پڑھنے کی جزا مت پوچھیے

 

بس ارادہ کیجیے کہ نعت لکھنا ہے مجھے

کس طرح طرزِ سخن ہو گی عطا مت پوچھیے

 

چند گھڑیاں وہ جو گزریں تھیں حرم کے صحن میں

کس بلندی پر تھا یہ بختِ رسا مت پوچھیے

 

کس طرح یکبارگی ہو گا ہر اک دل پُر سکوں

حشر میں جب ہوں گے وہ جلوہ نما مت پوچھیے

 

دیکھ کر ماہِ ربیع النور کا ماہِ حسیں

ہجر کیوں اس دیدۂ نم سے بہا مت پوچھیے

 

دیکھ کر وہ گنبدِ سر سبز اپنی آنکھ سے

یک بہ یک کیوں دل دھڑکتا رک گیا مت پوچھیے

 

کوئی حجت مت کریں منظر ہے عبدِ مصطفٰی

کیوں سجا رکھتا ہے سر پر نقشِ پا مت پوچھیے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ