اردوئے معلیٰ

Search

گفتگو کب ھے کام اُداسی کا

گہری چُپ ھے کلام اُداسی کا

 

خاص آنکھیں عطا ھوئی ھیں تُجھے

چھوڑ دے رنگ عام اُداسی کا

 

قہقہوں سے لدے پھندے ھوئے شخص

تُجھ کو پہنچے سلام اُداسی کا

 

دل میں تو یُونہی آتی جاتی ھے

روح میں ھے قیام اُداسی کا

 

آج برسوں کے بعد آیا ھے

اُس گلی سے پیام اُداسی کا

 

دھیان کے پائیں باغ میں کل شب

دیدنی تھا خرام اُداسی کا

 

میرے لہجے میں تازہ رھتا ھے

ذائقہ صبح و شام اُداسی کا

 

کُود جائے گی ایک دن چھت سے

کھیل ھوگا تمام اُداسی کا

 

با وضُو ھو کے روئیے، صاحب

کیجیے احترام اُداسی کا

 

راہ تھی مُسکراھٹوں کی مگر

خوف تھا گام گام اُداسی کا

 

پیاس کے ساتھ خوش رھُوں گا مَیں

توڑ ڈالوں گا جام اُداسی کا

 

اک مکمل علاج ھے تو سہی

آپ کی ناتمام اُداسی کا

 

عشق کے دیوتا نے بخشا ھے

ایک داسی کو نام اُداسی کا

 

تج دیا تاج ایک دن یُونہی

بادشہ تھا غلام اُداسی کا

 

آ ، محبت کے معنی سمجھاؤں

یہ بھی ھے ایک نام اُداسی کا

 

بڑی حسّاس سی ھے، رو دے گی

ایسے پلّو نہ تھام اُداسی کا

 

ایک ھنس مُکھ کی دید سے، فارس

ھوگیا اھتمام اُداسی کا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ