ہر صاحب دل، صاحب جاں، صاحب ادراک

ہر صاحب دل، صاحب جاں، صاحب ادراک , اے صاحب لولاک

رکھتا ہے ترے شوق میں دامان جگر چاک , اے صاحب لولاک

 

پڑتی ہیں تمدن میں ترے بعد سے گرہیں , گر غور سے دیکھیں

کھلتے ہیں ترے قرب سے تہذیب کے پیچاک , اے صاحب لولاک

 

منظر جو ترے شوخ اشاروں نے بنا ہے , دیکھا نہ سنا ہے

اب تک مہ و خورشید پہ بیٹھی ہے تری دھاک , اے صاحب لولاک

 

جو مرتبہ شمع رسالت کو نہ سمجھے , پروانوں سے الجھے

اس شان کے ہر ابلہ توحید کے سر خاک , اے صاحب لولاک

 

جس میں ترا قانون معطل ہو وہ خطہ , دوزخ کا ہے حصہ

ہر چند اسے لوگ کہیں پاک نہیں پاک , اے صاحب لولاک

 

تھی جس سے کبھی شعلہ بدن وادی ایمن , وہ برق نشیمن

ہمت سے تری آج ہوا زینت فتراک , اے صاحب لولاک

 

اقصیٰ سے سماوات سے سدرہ سے دنیٰ سے , طوبیٰ کی فضا سے

گذرا ہے بتدریج ترا مرکب چالاک , اے صاحب لولاک

 

تفصیل پہ تفصیل ہے اعماق میں اعماق , یہ دیکھ کے براق

آئینہ حیرت سے سر گنبد افلاک , اے صاحب لولاک

 

امت کے لیے زیر قدم شہپر جبریل , اللہ رے تجلیل

فردوس بریں تیرے تبسم سے طربناک , اے صاحب لولاک

 

دوزخ میں بھی جائے گا تو ہرگز نہ جلے گا , پھولے گا پھلے گا

پہنے گا دل نذر تری نعت کی پوشاک , اے صاحب لولاک

 

آؤں میں بھلا کیسے مدینہ میں ترے پاس , دیوار ہے احساس

گرچہ ہوں سیہ کار پہ اتنا نہیں بے باک , اے صاحب لولاک

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ